Categories
News

عامر لیاقت کی بیٹی نے والد کے پوسٹ مارٹم کے حوالے سے صاف صاف بتا دیا

لاہور: (ویب ڈیسک) معروف اینکر پرسن اور رکن قومی اسمبلی عامر لیاقت کی صاحبزادی دعا نے والد کے پوسٹ مارٹم کو بھائی کی لندن واپسی سے مشروط کردیا۔ نجی ٹی وی کے مطابق عامر لیاقت حسین دوپہر ایک بجے کے قریب اپنے گھر میں مردہ حالت میں پائے گئے، جنہیں ایمبولینس کے ذریعے اسٹیڈیم روڈ پر واقع نجی اسپتال منتقل کیا گیا۔ ڈاکٹرز نے معائنے کے بعد عامر لیاقت کے انتقال کی تصدیق کی اور ضابطے کی کارروائی کے بعد لاش کو لواحقین کے حوالے کردیا،

جس کے بعد چھیپا ایمبولینس کے ذریعے عامر لیاقت کی میت کو نجی اسپتال سے پوسٹ مارٹم کے لیے جناح اسپتال منتقل کیا گیا۔ عامر لیاقت کی میت جناح پہنچتے ہی اُن کی پہلی اہلیہ بشری اقبال اپنی بیٹی دعا عامر کے ساتھ اسپتال پہنچیں جہاں مشاورت کے بعد بیٹی نے فوری پوسٹ مارٹم کروانے سے انکار کیا۔دعا عامر نے کہا کہ اہل خانہ پوسٹ مارٹم کا فیصلہ لندن سے بھائی کی واپسی کے بعد کریں گے۔ خیال رہے رکن قومی اسمبلی ڈاکٹر عامر لیاقت حسین طبیعت خرابی کے سبب انتقال کرگئے۔ نجی ٹی وی کے مطابق معروف ٹی وی میزبان اور رکن قومی اسمبلی ڈاکٹر عامر لیاقت حسین انتقال کرگئے، وہ اپنے گھر میں مردہ پائے گئے۔ اطلاعات کے مطابق عامر لیاقت حسین کے کمرے کا دروازہ بند تھا جسے گھر کے ملازمین کافی دیر سے کھٹکھٹا رہے تھے، بعدازاں دروازہ زبردستی کھولا گیا تو عامر لیاقت حسین مردہ حالت میں پائے گئے۔ انہیں اسپتال منتقل کیا گیا جہاں ان کے انتقال کی تصدیق ہوگئی۔

پولیس کا موقف ہے کہ موت کی وجوہات کا تعین کرنے کے لیے ان کی لاش کا پوسٹ مارٹم کرایا جائے گا، فی الحال ان کا گھر سیل کرکے شواہد جمع کیے جا رہے ہیں۔ ڈاکٹروں نے کہا ہے کہ انہیں مردہ حالت میں اسپتال لایا گیا، موت کے آدھے گھنٹے بعد انہیں اسپتال منتقل کیا گیا۔عامر لیاقت کی لاش کو پوسٹ مارٹم کے لیے جناح اسپتال منتقل کردیا گیا جہاں موت کی وجوہات کے تعین کے لیے مختلف ٹیسٹ کیے گئے تاہم موت حتمی وجہ کے تعین کے لیے پوسٹ مارٹم کیا جائے گا۔ پوسٹ مارٹم ڈاکٹر سمیعہ کی نگرانی میں تین رکنی بورڈ کرے گا۔ دو میل میڈیکولیگل افسر بورڈ میں شامل ہیں۔ عامر لیاقت کے ملازم کا بیان ہے کہ انہیں رات سے ہی سینے میں تکلیف تھی، ہم نے رات کو ہی انہیں اسپتال لے جانے کا کہا مگر انہوں ںے منع کر دیا تھا، کمرے میں انہیں مردہ حالت میں پایا تو شور مچایا جس پر اہل محلہ جمع ہوگئے جن کی مدد سے عامر لیاقت کو اسپتال منتقل کیا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔