Categories
صحت

حکومتی حکمت عملی کامیاب ، ہیضے کی وبا پر قابو پا لیا

وفاقی حکومت کے بروقت اقدامات اور بہترین حکمت عملی کی بدولت بلوچستان کے ضلع ڈیرہ بگٹی میں پھیلنے والی ہیضے کی وباء پر قابو پا لیا گیا ، ہیضے سے متاثر ہونے والے 3615 متاثرین مکمل طور پر صحت یاب ہو گئے ۔ زیر علاج مریضوں کی تعداد صرف تین رہ گئی۔ بلوچستان کے ضلع ڈیرہ بگٹی کے علاقے پیر کوہ میں گزشتہ دنوں ہیضے کی وبا پھوٹ پڑنے سے شہریوں کی زندگی دشوار ہو گئی ،

وزیر اعظم شہباز شریف کی خصوصی ہدایت پر حکومت نے بروقت اقدامات کرتے ہوئے متاثرہ علاقے میں ہیضے کی وبا پر مکمل طور پر قابو پا لیا ۔ بلوچستان حکومت کی طرف سے وزیر اعظم شہباز شریف کو وباء پھیلنے سے متعلق مکمل رپورٹ پیش کر دی گئی جس میں بتایا گیا ہے کہ پیر کوہ ڈیرہ بگٹی میں پھیلنے والے ہیضے کی بنیادی وجہ پتھر نالے کے قدرتی چشمے کے پانے کا استعمال تھا ۔ رپورٹ میں حکومت بلوچستان نے بتایا ہے کہ وزیر اعظم کی ہدایت کے بعد پیر کوہ کے پتھر نالے کے پانی کا استعمال فوری طور پر روک دیا گیا اور اس کی کلورینشن کرنے کے بعد اسے دوبارہ پینے کے قابل بنا کر عوام کے استعمال کیلئے کھول دیا گیا ۔ وزیر اعظم کی ہدایت کی روشنی میں صوبائی حکومت کی طرف سے فوری طور پر ادویات فراہمی کیلئے فنڈز مختص کئے گئے ۔ پیر کوہ میں ہنگامی بنیادوں پر دو میڈیکل کیمپس اور بی ایچ یو پیر کوہ کو 20 بستروں پر مشتمل ہسپتال بنانے کے علاوہ کوئٹہ سے 24 ڈاکٹروں اور 32 پیرا میڈیکل سٹاف کے عملے کو بھی پیر کوہ بھجوایا گیا ۔

صوبائی حکومت کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ پیر کوہ اور ڈیرہ بگٹی میں لیبارٹریوں کا قیام بھی عمل میں لایا گیا ، مقامی انتظامی کی موجودگی کو یقینی بنانے اور گھر گھر آگاہی فراہم کرنے کیلئے بھی ٹیمیں تشکیل دی گئیں ۔ وباء پر قابو پانے کیلئے آپریشن کی براہ راست نگرانی وزیر انسداد منشیات نوابزادہ شاہ زین بگٹی ، چیف سیکرٹری بلوچستان ، صوبائی سیکرٹری ہیلتھ سمیت متعلقہ اعلیٰ حکام موقع پر موجود رہے ۔ کنٹری ڈائریکٹر ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن ڈاکٹر پلیتھانے بھی متاثرہ علاقے کا دورہ کیا۔ وزیر اعظم شہباز شریف کو پیش کی گئی رپورٹ کے مطابق علاقے میں صاف پانی کی فراہمی کیلئے فوری طور پر ایک کروڑ روپے کی فراہمی اور پی ڈی ایم اے کی طرف سے 4000 گیلنز صاف پانی ذخیرہ کرنے والے ٹینکس بھی فراہم کئے گئے ہیں ۔

شہباز شریف کی خصوصی ہدایت پر پیر کوہ زینکوہ میں واٹر سپلائی کی سکیموں کو ترجیحی بنیادوں پر مکمل کرنے کیلئے اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں ۔ جبکہ متاثرہ افراد کو فوری طور پر طبی امداد کے ساتھ صاف پانی اور کھانے پینے کی دیگر اشیاء بھی فراہم کی گئیں ۔ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی طرف سے وبا ء پر قابو پانے کیلئے ایک ایمبولینس ، ادویات ، 12 بستروں پر مشتمل ہسپتال بھی فراہم کیا گیا ، مستقبل میں ایسی وبا سے بچاو کیلئے قلیل مدتی اور طویل مدتی منصوبہ بندی بھی تیار کر لی گئی ہے ۔
مریض کے گردے میں کتنی پتھریاں نکالی، ڈاکٹروں کا بڑا کارنامہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔