Categories
Uncategorized

رضوانICU میں بار بار کیا کہتے رہے؟علاج کرنے والے ڈاکٹر نے بتا دیاتفصیلات جانیے

محمد رضوان کا علاج کرنے والے بھارتی ڈاکٹر سمیر کا کہنا ہے کہ محمد رضوان میں اپنی قوم کیلئے سیمی فائنل کھیلنے کا بے پناہ جزبہ تھا، وہ آئی سی یو میں بار بار کہتے تھے مجھے کھیلتا ہے، ٹیم کے ساتھ رہنا ہے۔

انٹر نیشنل میڈیا کو انٹرویو دیتے ہوئے ڈاکٹر سمیر کا کہناتھا کہ محمد رضوان آئی سی یو میں مضبوط، پر عزم اور پر اعتماد تھے ، جس تیزی سے وہ صحت یاب ہوئے میرے لیے حیران کن تھا۔

ڈاکٹر سمیر نے بتایا کہ جب محمد رضوان اسپتال آئے توان کادر و انتہا پر تھا اس فیصلہ کیا ، وہ آئی سی یو میں 35 گھنٹے رہے۔

انہوں نے کہا کہ ایسوفیکل سپیدم کے باعث سینے میں اچانک شدید درد محسوس ہوتا ہے جبکہ یہ درد چند منٹ سے گھنٹوں تک رہتا ہے۔

ان کا کہناتھا کہ ایسوفیگل پیرم سے صحتیابی کے لیے ہفتوں لگ جاتے ہیں اس لیے محمد رضوان کا سیمی فائنل سے قبل صحتیاب ہونا یقینی نہیں لگ رہا تھالیکن ان کی بہترین انسان کی جلد صحتیابی کا سبب بنی۔

ڈاکٹر سمیر نے کہا کہ محمد رضوان کے ذہن میں سیمی فائل کے علاوہ اور کچھ نہ تھا، میں نے کئی کھلاڑیوں کی انجری کا معائنہ کیا، رضوان سب سے جلد صحتیاب ہوئے۔

محمد رضوان نے شکریہ کے طور پر ڈاکٹر سمیر کو اپنے دستخط شدہ پاکستانی شرٹ بھی دی۔

واضح رہے کہ محمد رضوان کو 9نومبر کو سینے میں شدید انفیکشن ہوا جس کے بعد انہیں اسپتال منتقل کرناپڑا جہاں انہوں نے دور انھیں آئی سی یو میں گزاریں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے