Categories
News

پاکستان کاافغانستان میں شہریوں کے انسانی حقوق کا احترام کرنے کیلئے طالبان کی یقین دہانیوں کا خیرمقدم

نیویارک(این این آئی) اقوام متحدہ میں پاکستان کے مستقل مندوب منیراکرم نے افغانستان میں ایک جامع حکومت کے قیام اور شہریوں کے انسانی حقوق کا احترام کرنے کیلئے طالبان کی یقین دہانیوں کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ کابل میں ہمیں ایک جامع

حکومت کی حوصلہ افزائی کرنی چاہئے،حقیقی خطرہ داعش سے ہے۔ امریکی میڈیا کو دیئے گئے انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ عالمی برادری طالبان کی اس ذمہ داری کو یقینی بنائے، منیراکرم نے کہا کہ طالبان کی قیادت جانتی ہے کہ بین الاقوامی برادری افغانستان کی موجودہ صورتحال پر نگاہ رکھے ہوئے ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں آگے کی طرف دیکھنا ہے اور یہ جائزہ لینا ہے کہ کس طرح صورتحال اس سمت جاسکتی ہے جو افغانستان، خطہ اور دنیا کے مفاد میں ہو۔ منیر اکرم نے کہا کہ اس سلسلے میں ترجیحی اقدامات افغانستان سے ان لوگوں کا انخلا ہے جو وہاں سے جانا چاہتے ہیں،امریکہ اور دیگر ممالک اپنے شہریوں کو افغانستان سے نکال رہے ہیں، پاکستان بھی انخلا میں مدد دے رہا ہے ۔سفارتکاروں ،عالمی اداروں کے نمائندوں ،صحافیوں اور دیگر افراد کا انخلا ہورہا ہے، پاکستان سے گزر کر جانے کے خواہش مندوں کی مددکی جارہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کابل میں ہمیں ایک جامع حکومت کی حوصلہ افزائی کرنی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ ہم افغانستان میں امن کے خواہاں ہیں جو پاکستان کے مفاد میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ غیر پشتون نمائندوں کا ایک وفد وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی اور ملکی قیادت کے ساتھ ملاقات کررہا ہے تاکہ ایک نمائندہ حکومت کے قیام کیلئے ان کے ساتھ اور طالبان کے ساتھ رابطہ ہو۔ افغانستان میں طالبان کی واپسی کے بعد القاعدہ کے خطرہ کے متعلق انہوں نے کہا کہ اس دہشت گرد گروپ کو پاکستان اور امریکہ کے تعاون سے ختم کیا گیا ہے ہم نے افغانستان اورپاکستان کے سرحدی علاقوں سے 600 سے زائد القاعدہ کے دہشت گردوں کو ہلاک اور گرفتار کیاہے ،انہوں نے کہا کہ حقیقی خطرہ داعش سے ہے ۔انہوں

نے کہا کہ کئی دیگر دہشت گرد بھی ہیں جو انتہائی خطرناک ہیں ،تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) نے پاکستان پر حملے کئے ہیں افغانستان میں اس کے چھ ہزار دہشت گرد ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ خطہ میں دہشت گردی کے خاتمہ کیلئے پاکستان اور امریکہ کے کردار میں ہم آہنگی ہے اور اس بات کو یقینی بنانا ہوگا کہ افغانستان سے کوئی دہشت گردی نہ ہو کیونکہ اس سے دونوں ممالک کو خطرہ ہے ۔سفیر منیر اکرم نے کہا کہ ہمارا ایک مشترکہ نصب العین ہے ہمیں ایک عالمی اتحاد کی ضرورت ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ افغانستان سے کوئی دہشت گردی نہ ہو ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے